7

سوال_ کیا فجر کی اذان میں “الصلاة خير من النوم” کہنا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہے یا یہ حضرت عمر (رض)کی ایجاد ہے؟ تفصیل سے راہنمائی فرمائیں!

“سلسلہ سوال و جواب نمبر-360”
سوال_ کیا فجر کی اذان میں “الصلاة خير من النوم” کہنا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہے یا یہ حضرت عمر (رض)کی ایجاد ہے؟ تفصیل سے راہنمائی فرمائیں!

Published Date: 23-10-2021

جواب۔۔!
الحمدللہ:

*کچھ لوگ اپنی بدعات کو ثابت کرنے کیلئے اور کچھ امیر المومنین حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کو بدنام کرنے کیلئے ان پر الزام لگاتے ہیں کہ انہوں نے فجر کی اذان میں “الصلاة خير من النوم” کا اضافہ کیا ہے، جبکہ یہ سفید جھوٹ ہے، اور حقیقت یہ ہے کہ نبی مکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ابو محذورہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو اذان کا طریقہ جو بذات خود تعلیم فرمایا اس میں صبح کی اذان کے لیے”حی علی الفلاح” کےبعد دو مرتبہ”الصلاة خير من النوم” کہنا صحیح احادیث سے ثابت ہے*

دلائل ملاحظہ فرمائیں!

📚سنن ابوداؤد
کتاب: نماز کا بیان
باب: اذان کا طریقہ
حدیث نمبر: 500
حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا الْحَارِثُ بْنُ عُبَيْدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ أَبِي مَحْذُورَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَدِّهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏عَلِّمْنِي سُنَّةَ الْأَذَانِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَمَسَحَ مُقَدَّمَ رَأْسِي، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ تَقُولُ:‏‏‏‏ اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏تَرْفَعُ بِهَا صَوْتَكَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ تَقُولُ:‏‏‏‏ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏تَخْفِضُ بِهَا صَوْتَكَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ تَرْفَعُ صَوْتَكَ بِالشَّهَادَةِ:‏‏‏‏ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنْ كَانَ صَلَاةُ الصُّبْحِ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتَ:‏‏‏‏ الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنَ النَّوْمِ، ‏‏‏‏‏‏الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنَ النَّوْمِ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ.
ترجمہ:
ابومحذورہ ؓ کہتے ہیں کہ میں نے عرض کیا: اللہ کے رسول ﷺ! آپ مجھے اذان کا طریقہ سکھا دیجئیے، تو آپ نے میرے سر کے اگلے حصہ پر (ہاتھ) پھیرا اور فرمایا: کہو: الله أكبر الله أكبر الله أكبر الله أكبر ، تم انہیں بلند آواز سے کہو، پھر کہو: أشهد أن لا إله إلا الله أشهد أن لا إله إلا الله أشهد أن محمدا رسول الله أشهد أن محمدا رسول الله انہیں ہلکی آواز سے کہو، پھر انہیں کلمات شہادت أشهد أن لا إله إلا الله أشهد أن لا إله إلا الله أشهد أن محمدا رسول الله أشهد أن محمدا رسول الله کو بلند آواز سے کہو ١ ؎، پھر حى على الصلاة حى على الصلاة حى على الفلاح حى على الفلاح کہو، اور اگر صبح کی اذان ہو تو الصلاة خير من النوم الصلاة خير من النوم کہو، پھر الله أكبر الله أكبر لا إله إلا الله کہو۔
(سنن ابو داؤد-504)(مودار الظمان_289)
(طبرانی کبیر 7/174 )(حلیۃ الاولیاء 8/310)
( عبدالرزاق 1/458 ،ح1779)
(شرح السنۃ باب التثویب 2/263،264(408) (بیہقی 1/394) (ابن خذیمہ 1/201(385) دارقطنی 1/233)
یہ حدیث بالکل صحیح ہے،
(الألباني صحيح أبي داود ٥٠١ • صحيح)
(الألباني صحيح النسائي ٦٣٢ • صحيح)
(شعيب الأرنؤوط تخريج سنن الدارقطني ٩٠٣ • صحيح لغيره)
(الطحاوي شرح مشكل الآثار ١٥‏/٣٦٠ • صحيح •

📙 *ایک ضروری وضاحت*
اس سے ترجیع یعنی شہادتین کو دو دو بار کہنا ثابت ہوا۔ اسے ترجیح والی اذان کہتے ہیں، یاد رہے صحیح حدیث سے اکہری اذان و اقامت بھی ثابت ہے اور دوہری یعنی ترجیح والی اذان و اقامت بھی ثابت ہے، ہمارے ہاں اکثر لوگ اذان تو اکہری کہتے ہیں اور اقامت دوہری کہتے ہیں جو کہ سرا سر سنت کیخلاف ہے،جب اذان ترجیع والی ہو تو اقامت بھی ترجیع والی ہونی چاہیے اور اگر اذان اکہری ہو تو اقامت بھی اکہری ہونی چاہیے
*نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم کی سنت مبارکہ سے اذان و اقامت کے دو طریقے صحیح احادیث کے ساتھ ثابت ہیں،ایک طریقہ اذان و اقامت کا جو حضرت بلال رضی اللہ عنہ کہا کرتے تھے جسے اکہری اذان و اقامت بھی کہتے ہیں،اور دوسرا طریقہ اذان و اقامت کا جو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت ابو محذورہ رضی اللہ عنہ کو سکھایا تھا جسے ترجیح والی یعنی دوہری اذان و اقامت بھی کہا جاتا ہے*
(اسکی تفصیل ہم سابقہ سلسلہ نمبر-284 میں بیان کر چکے ہیں)

*ابو محذورہ کی یہ حدیث سنن نسائی میں ملاحظہ فرمائیں*

📚سنن نسائی
کتاب: اذان کا بیان
باب: دوران سفر اذان دینے سے متعلق احادیث
حدیث نمبر: 634 ، 633
أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَجَّاجٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ جُرَيْجٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُثْمَانَ بْنِ السَّائِبِ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي أَبِي وَأُمُّ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ أَبِي مَحْذُورَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي مَحْذُورَةَ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ لَمَّا خَرَجَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنْ حُنَيْنٍ، ‏‏‏‏‏‏خَرَجْتُ عَاشِرَ عَشْرَةٍ مِنْ أَهْلِ مَكَّةَ نَطْلُبُهُمْ، ‏‏‏‏‏‏فَسَمِعْنَاهُمْ يُؤَذِّنُونَ بِالصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏فَقُمْنَا نُؤَذِّنُ نَسْتَهْزِئُ بِهِمْ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ قَدْ سَمِعْتُ فِي هَؤُلَاءِ تَأْذِينَ إِنْسَانٍ حَسَنِ الصَّوْتِ، ‏‏‏‏‏‏فَأَرْسَلَ إِلَيْنَا، ‏‏‏‏‏‏فَأَذَّنَّا رَجُلٌ رَجُلٌ وَكُنْتُ آخِرَهُمْ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ حِينَ أَذَّنْتُ:‏‏‏‏ تَعَالَ، ‏‏‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏فَأَجْلَسَنِي بَيْنَ يَدَيْهِ فَمَسَحَ عَلَى نَاصِيَتِي وَبَرَّكَ عَلَيَّ ثَلَاثَ مَرَّاتٍ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ قَالَ:‏‏‏‏ اذْهَبْ فَأَذِّنْ عِنْدَ الْبَيْتِ الْحَرَامِ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ كَيْفَ يَا رَسُولَ اللَّهِ ؟ فَعَلَّمَنِي كَمَا تُؤَذِّنُونَ الْآنَ بِهَااللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ، ‏‏‏‏‏‏الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنَ النَّوْمِ، ‏‏‏‏‏‏الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنَ النَّوْمِ فِي الْأُولَى مِنَ الصُّبْحِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَعَلَّمَنِي الْإِقَامَةَ مَرَّتَيْنِ:‏‏‏‏ اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ، ‏‏‏‏‏‏قَدْ قَامَتِ الصَّلَاةُ، ‏‏‏‏‏‏قَدْ قَامَتِ الصَّلَاةُ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُ أَكْبَرُ اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ. قَالَ ابْنُ جُرَيْجٍ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي عُثْمَانُ هَذَا الْخَبَرَ كُلَّهُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏وَعَنْ أُمِّ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ أَبِي مَحْذُورَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُمَا سَمِعَا ذَلِكَ مِنْ أَبِي مَحْذُورَةَ.
ترجمہ:
ابومحذورہ ؓ کہتے ہیں کہ جب رسول اللہ ﷺ حنین سے نکلے تو میں (بھی) نکلا، میں اہل مکہ کا دسواں شخص تھا، ہم انہیں تلاش کر رہے تھے تو ہم نے انہیں نماز کے لیے اذان دیتے ہوئے سنا، تو ہم بھی اذان دینے (اور) ان کا مذاق اڑانے لگے، تو رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: ان لوگوں میں سے ایک اچھی آواز والے شخص کی اذان میں نے سنی ہے چناچہ آپ نے ہمیں بلا بھیجا تو یکے بعد دیگرے سبھی لوگوں نے اذان دی، اور میں ان میں سب سے آخری شخص تھا جب میں اذان دے چکا (تو آپ ﷺ نے فرمایا) : ادھر آؤ! چناچہ آپ نے مجھے اپنے سامنے بٹھایا، اور میری پیشانی پر (شفقت کا) ہاتھ پھیرا، اور تین بار برکت کی دعائیں دیں، پھر فرمایا: جاؤ اور خانہ کعبہ کے پاس اذان دو (تو) میں نے کہا: کیسے اللہ کے رسول؟ تو آپ نے مجھے اذان سکھائی جیسے تم اس وقت اذان دے رہے ہو:
*اللہ أكبر اللہ أكبر، اللہ أكبر اللہ أكبر، اللہ أكبر اللہ أكبر، اللہ أكبر اللہ أكبر، أشهد أن لا إله إلا اللہ، أشهد أن لا إله إلا اللہ، أشهد أن محمدا رسول اللہ، أشهد أن محمدا رسول اللہ (پھر دوبارہ) أشهد أن لا إله إلا اللہ، أشهد أن لا إله إلا اللہ، أشهد أن محمدا رسول اللہ، أشهد أن محمدا رسول اللہ، حى على الصلاة، حى على الصلاة، حى على الفلاح، حى على الفلاح، اللہ أكبر اللہ أكبر، لا إله إلا اللہ، اور فجر میں الصلاة خير من النوم، الصلاة خير من النوم نماز نیند سے بہتر ہے، نماز نیند سے بہتر ہے کہا،
(اور) کہا: مجھے آپ نے اقامت دہری سکھائی:
اللہ أكبر اللہ أكبر، اللہ أكبر اللہ أكبر، أشهد أن لا إله إلا اللہ، أشهد أن لا إله إلا اللہ، أشهد أن محمدا رسول اللہ، أشهد أن محمدا رسول اللہ، حى على الصلاة، حى على الصلاة، حى على الفلاح، حى على الفلاح، قد قامت الصلاة،قد قامت الصلاة، اللہ أكبر اللہ أكبر، لا إله إلا اللہ۔
ابن جریج کہتے ہیں کہ یہ پوری حدیث مجھے عثمان نے بتائی، وہ اسے اپنے والد اور عبدالملک بن ابی محذورہ ؓ کی ماں دونوں کے واسطہ سے روایت کر رہے تھے کہ ان دونوں نے اسے ابومحذورہ ؓ سے سنی ہے۔
تخریج دارالدعوہ: انظر حدیث رقم: ٦٣١ (صحیح )
قال الشيخ الألباني: صحيح
(صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 633) (مسند احمد-15376)

*حضرت بلال رضی اللہ عنہ کی حدیث ملاحظہ فرمائیں*

📚سنن ابن ماجہ
کتاب: اذان کا بیان
باب: اذان کا مسنون طریقہ
حدیث نمبر: 716
حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ رَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ الْمُبَارَكِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَعْمَرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الزُّهْرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْبِلَالٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ أَتَى النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُؤْذِنُهُ بِصَلَاةِ الْفَجْرِ، ‏‏‏‏‏‏فَقِيلَ:‏‏‏‏ هُوَ نَائِمٌ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنَ النَّوْمِ، ‏‏‏‏‏‏الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنَ النَّوْمِ، ‏‏‏‏‏‏فَأُقِرَّتْ فِي تَأْذِينِ الْفَجْرِ، ‏‏‏‏‏‏فَثَبَتَ الْأَمْرُ عَلَى ذَلِكَ.
ترجمہ:
بلال ؓ سے روایت ہے کہ وہ نبی اکرم ﷺ کے پاس نماز فجر کی اطلاع دینے کے لیے آئے، ان کو بتایا گیا کہ آپ سوئے ہوئے ہیں، تو بلال ؓ نے دو بار الصلاة خير من النوم، الصلاة خير من النوم کہا نماز نیند سے بہتر ہے، نماز نیند سے بہتر ہے تو یہ کلمات فجر کی اذان میں برقرار رکھے گئے، پھر معاملہ اسی پر قائم رہا۔
(ابن الملقن (ت ٧٥٠)، البدر المنير ٣‏/٣٥٨ • إسناد كل رجاله ثقات أئمة أعلام مخرج حديثهم في الصحيحين إلا عمرو حافظ )
( أخرجه ابن ماجه_٧١٦)،
( والطبراني (١/٣٥٤) (١٠٨١)
( والبيهقي (٢٠٦٣) باختلاف يسير. •
(تحفة الأشراف: ٢٠٣٣، ومصباح الزجاجة: ٢٦٥) (صحیح)
(سند میں ابن المسیب اور بلال ؓ کے درمیان انقطاع ہے، لیکن ان کی مراسیل علماء کے یہاں مقبول ہیں، نیز اس کے شواہد بھی ہیں، ملاحظہ ہو: مصباح الزجاجة )
(علامہ البانی رحمہ اللہ نے صحيح ابن ماجه ٥٩٢ • صحيح قرار دیا ہے )

*حضرت انس رضی اللہ عنہ سے بھی صحیح سند سے ثابت ہے کہ وہ اذان فجر میں ان کلمات کو کہنا سنت کہتے تھے،*

حدیث ملاحظہ فرمائیں:

📚 عن أنسٍ قال: من السُّنَّةِ إذا قال المؤذِّنُ في أذانِ الفجرِ حيَّ على الفلاحِ قال: الصَّلاةُ خيرٌ من النَّومِ ، الصَّلاةُ خيرٌ من النَّومِ ، اللهُ أكبرُ اللهُ أكبرُ لا إلهَ إلّا اللهُ
“انس رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے فرمایا:سنت میں سے یہ ہے کہ جب موذن فجر کی اذان میں حی علی الفلاح کہہ لے تو دو مرتبہ “الصلاة خير من النوم” کہے۔”
پھر “اللہ اکبر اللہ اکبر لا الہ الاللہ”
(أخرجه ابن خزيمة-386)(والدارقطني (1/243)
(شعيب الأرنؤوط تخريج المسند ٣٩‏/ ٣٣٨ إسناده صحيح)
( السنن الكبرى للبيهقي ١‏/٤٢٣ • إسناده صحيح )
(عبد الحق الإشبيلي الأحكام الصغرى ١٨٩ [أشار في المقدمة أنه صحيح الإسناد)
(ابن الملقن (ت ٧٥٠)، تحفة المحتاج ١‏/٢٦٩ • صحيح أو حسن)
(ابن حجر العسقلاني (ت ٨٥٢)، نتائج الأفكار ١‏/٣٢٣ • صحيح )
( التحقیق لابن جوزی 1/311 )

*اور یہ بات اصول حدیث میں واضح ہے کہ جب صحابی کسی امر کے بارے میں کہے کہ یہ سنت ہے تو اس سے مراد نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت ہی ہوتی ہے،*

📚 امام شافعی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں:
“واصحاب النبي صلي الله عليه وسلم لا يقولون السنة الا لسنة رسول الله صلي الله عليه وسلم ”
“نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ کرام رضوان اللہ عنھم اجمعین لفظ”سنت” صرف سُنت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر ہی بولتے تھے۔”
(کتاب الآم 1/240)

*پس ثابت ہوا کہ انس بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا “الصلاة خير من النوم” کو فجر کی اذان میں حی علی الفلاح کے بعد دوبار سنت کہنے کا مطلب یہی ہے کہ یہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا طریقہ ہے*

*مذکورہ بالا احادیث صحیحہ صریحہ سے معلوم ہوا کہ فجر کی اذان میں حی علی الفلاح کے بعد دو مرتبہ”الصلاة خير من النوم” کہنا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت ہے جو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے صحابہ کرام رضوان اللہ عنھم اجمعین کو تعلیم فرمائی۔یہ عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی ایجاد نہیں ہے جیسا کہ روافض کہا کہنا ہے سیدنا عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی طرف یہ بات غلط منسوب ہے*

*اور جس روایت کاحوالہ دے کر عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی طرف یہ بات منسوب کی جاتی ہے وہ پایہ تکمیل کو نہیں پہنچتی، وہ روایت ملاحظہ ہو*

📚”عن مالك أنه بلغه أن المؤذن جاء إلى عمر بن الخطاب يؤذنه لصلاة الصبح فوجده نائما فقال الصلاة خير من النوم فأمره عمر أن يجعلها في نداء الصبح”
“مالک رحمۃ اللہ علیہ کو یہ بات پہنچی کہ موذن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے پاس نماز صبح کی اطلاع دینے کے لیے آیا تو اس نے عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو سوتا ہوا پایا۔موذن نے کہا “الصلاة خير من النوم” عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اسے حکم دیا کہ اسے صبح کی اذان میں کہے۔”
(موطا مالک کتاب الصلاۃ باب ماجاء فی النداءللصلوٰۃ (8) 42 مع ضوء السالک)
(ابن عبد البر (ت ٤٦٤)، الاستذكار ١‏/٤٤٢ • لا أعلمه عن عمر من وجه يحتج به وتعلم صحته)
(الألباني (ت ١٤٢٠)، تخريج مشكاة المصابيح ٦٢٢ • ضعيف)

*موطا کی یہ روایت معضل ومرسل ہونے کی وجہ سے ضعیف ہے۔یہی روایت سنن دارقطنی 1/243 میں بھی موجود ہے لیکن اس کی سند بھی صحیح نہیں۔اس میں کئی علل ہیں:*

🚫1۔سفیان ثوری مدلس ہے اور اس روایت میں تصریح بالسماع نہیں ۔

🚫2۔محمد بن عجلان بھی مدلس ہیں اور ان کی بھی تصریح بالسماع نہیں ہے۔علامہ البانی حفظہ اللہ مشکوٰۃ کی تحقیق میں فرماتے ہیں:
“وهو ضعيف لا عضاله اوارساله”
(مشکوٰۃ 1/206)

“یہ روایت معضل یامرسل ہونے کی وجہ سے ضعیف ہے۔”

🚫3۔ایک سند میں العمری ضعیف راوی ہے ۔

📙اگر یہ روایت صحیح بھی تسلیم کرلی جائے تو اس کی مراد وہ نہیں ہے جو روافض ذکر کرتے ہیں بلکہ مفہوم یہ ہے کہ عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سو رہے تھے اور موذن نے آکر یہ کلمہ ان کے پاس کہا تو انہوں نے بتایا کہ امیر کے دروازے پر آکر نیند سے بیدار کرنے کے لیے یہ کلمہ نہیں کہتے بلکہ اس کا تعلق فجر کی اذان کے ساتھ ہے لہذا اسے وہاں سے رکھا جائے۔جیسا کہ اور احادیث صحیحہ سے یہ بات واضح کی جا چکی ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے نماز فجر کی اذان میں یہ کلمہ تعلیم فرمایا ہے۔نیز یہ بھی معلوم کہ عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سنت رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی حفاظت کس انداز سے کرتے تھے کہ آپ کی تعلیمات میں کمی بیشی کو ناپسند کرتے تھے ۔جو کلمات جہاں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سکھائے،انہیں وہاں ہی رکھنے کاحکم دیا تو اس لحاظ سے یہ عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی منقبت اور شان کی دلیل ہوگی جو کہ روافض کے لیے سم قاتل ہے۔

📙اور یہ بھی یاد رہے کہ شیعہ حضرات نے جو اپنی اذان میں:
“اشهد ان امير المومنين وامام المتقين علي حجة الله علي الخلق”
وغیرہ کا اضافہ کیا ہے یہ کسی صحیح تو کجا ضعیف روایت سے بھی ثابت نہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ابو محذورہ یا بلال رضوان اللہ عنھم اجمعین میں سے کسی کو تعلیم دیا ہو بلکہ فقہ جعفریہ کی کتب میں ایسا کلمہ کہنے والے پر لعنت وارد ہوئی ہو۔(تفصیل کے لیے ملاحظہ ہو: (آپ کے مسائل اور ان کا حل قرآن وحدیث کی روشنی میں ج،ص 101تا108)

(کتاب : آپ کے مسائل اور ان کا حل قرآن وحدیث کی روشنی میں ج2،ص141)
(مآخذ محدث فتویٰ )

((( واللہ تعالیٰ اعلم باالصواب ))))

__________&______________

*موضوع سے ملتے جلتے سلسلہ جات*

📙اذان سن کر کیا پڑھنا چاہیے؟ اور کیا اذان کے بعد کلمہ پڑھنا یا کلمہ مکمل کرنا کسی حدیث سے ثابت ہے؟
(جواب کیلئے دیکھیں_ سلسلہ نمبر-13)

📙(اذان کے دوران بات کرنا کیسا ہے؟ کیا اذان کے دوران بات کرنے والے کو مرتے وقت کلمہ نصیب نہیں ہوتا؟
(جواب کیلئے دیکھیں سلسلہ نمبر_78)

📙سوال_ميرا تعلق بنگلہ ديش سے ہے جہاں ہم اذان كى طرح اقامت كے الفاظ بھى دوہرے كہتے ہيں، ليكن ميں نے ديكھا ہے كہ اكثر عرب ممالک ميں اقامت كے الفاظ دوہرے نہيں بلكہ ايک ايک بار ہى كہے جاتے ہيں، اس طرح اقامت كہنے كى صحيح دليل كيا ہے؟
(جواب کیلئے دیکھیں سلسلہ نمبر-284)

📙سوال_نومولود(یعنی پیدا ہونے والے بچے) کے کان میں اذان و اقامت کہنے کے بارے شرعی حکم کیا ہے؟ کیا یہ عمل سنت سے ثابت ہے؟
(جواب کیلئے دیکھیں- سلسلہ نمبر-293)

📙سوال- کرونا وائرس/یا کسی اور وبائی مرض کے پھیلنے کے خوف سے جماعت /جمعہ یا مصافحہ چھوڑنا کیسا ہے؟ اور کیا یہ عمل توکل الی اللہ کے خلاف ہے؟ نیز مؤذن کا اذان میں یہ کلمات کہنا کہ “گھروں میں نماز پڑھو” صرف بارش کیلئے ہے یا کسی اور وجہ سے بھی یہ کلمات کہے جا سکتے ہیں؟
(جواب کیلئے دیکھیں سلسلہ نمبر-324)

_________&_________

📲اپنے موبائل پر خالص قرآن و حدیث کی روشنی میں مسائل حاصل کرنے کے لیے “ADD” لکھ کر نیچے دیئے گئے پر سینڈ کر دیں،
📩آپ اپنے سوالات نیچے دیئے گئے پر واٹس ایپ کر سکتے ہیں جنکا جواب آپ کو صرف قرآن و حدیث کی روشنی میں دیا جائیگا,
ان شاءاللہ۔۔!
سلسلہ کے باقی سوال جواب پڑھنے
کیلیئے ہماری آفیشل ویب سائٹ وزٹ کریں
یا ہمارا فیسبک پیج دیکھیں::
یا سلسلہ بتا کر ہم سے طلب کریں۔۔!!

*الفرقان اسلامک میسج سروس*

آفیشل واٹس ایپ
+923036501765

آفیشل ویب سائٹ
http://alfurqan.info/

آفیشل فیسبک پیج//
https://www.facebook.com/Alfurqan.sms.service2/

الفرقان اسلامک میسج سروس کی آفیشل اینڈرائیڈ ایپ کا پلے سٹور لنک 👇

https://play.google.com/store/apps/details?id=com.alfurqan

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں