371

سوال_کسی کنویں وغیرہ میں کھڑے پانی سے وضو کرنا کیسا ہے؟ اور کتنی نجاست گرنے سے پانی ناپاک ہو جاتا ہے۔۔؟

“سلسلہ سوال و جواب نمبر-27″
سوال_کسی کنویں،تالاب یا نہر وغیرہ میں کھڑے یا جاری پانی سے وضو کرنا کیسا ہے؟ اور کتنی نجاست گرنے سے پانی ناپاک ہو جاتا ہے۔۔؟

Published Date: 3-2-2018

جواب۔۔۔۔
الحمدللہ۔۔۔۔!!!

*کسی کنویں،تالاب،حوض یا نہر وغیرہ میں کھڑے یا جاری پانی سے وضو کرنا جائز ہے بشرطیکہ کہ وہ پانی پاک ہو، اور پانی ناپاک کب ہوتا ہے اسکے بارے سب سے پہلے احادیث کا مطالعہ کرتے ہیں*

📚سنن ابوداؤد
کتاب: پاکی کا بیان
باب: بیئر بضاعہ کا بیان
حدیث نمبر: 67
حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ أَبِي شُعَيْبٍ، ‏‏‏‏‏‏وَعَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ يَحْيَى الْحَرَّانِيَّانِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ إِسْحَاقَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَلِيطِ بْنِ أَيُّوبَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ رَافِعٍ الْأَنْصَارِيِّ ثُمَّ الْعَدَوِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَهُوَ يُقَالُ لَهُ:‏‏‏‏ إِنَّهُ يُسْتَقَى لَكَ مِنْ بِئْرِ بُضَاعَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَهِيَ بِئْرٌ يُلْقَى فِيهَا لُحُومُ الْكِلَابِ وَالْمَحَايِضُ وَعَذِرُ النَّاسِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّ الْمَاءَ طَهُورٌ لَا يُنَجِّسُهُ شَيْءٌ، ‏‏‏‏‏‏
قَالَ أَبُو دَاوُد:‏‏‏‏
وسَمِعْت قُتَيْبَةَ بْنَ سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَأَلْتُ قَيِّمَ بِئْرِ بُضَاعَةَ عَنْ عُمْقِهَا. قَالَ:‏‏‏‏ أَكْثَرُ مَا يَكُونُ فِيهَا الْمَاءُ إِلَى الْعَانَةِ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ فَإِذَا نَقَصَ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ دُونَ الْعَوْرَةِ، ‏‏‏قَالَ أَبُو دَاوُد:‏‏‏‏ وَقَدَّرْتُ أَنَا بِئْرَ بُضَاعَةَ بِرِدَائِي مَدَدْتُهُ عَلَيْهَا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ ذَرَعْتُهُ فَإِذَا عَرْضُهَا سِتَّةُ أَذْرُعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَسَأَلْتُ الَّذِي فَتَحَ لِي بَابَ الْبُسْتَانِ، ‏‏‏‏‏‏فَأَدْخَلَنِي إِلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏هَلْ غُيِّرَ بِنَاؤُهَا عَمَّا كَانَتْ عَلَيْهِ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ لَا. وَرَأَيْتُ فِيهَا مَاءً مُتَغَيِّرَ اللَّوْنِ.
ترجمہ:
ابو سعید خدری ؓ کہتے ہیں کہ  میں نے رسول اللہ  ﷺ  کو اس وقت یہ فرماتے سنا جب کہ آپ سے پوچھا جا رہا تھا کہ بئر بضاعہ  ١ ؎  سے آپ  ﷺ  کے لیے پانی لایا جاتا ہے، حالانکہ وہ ایسا کنواں ہے کہ اس میں کتوں کے گوشت، حیض کے کپڑے، اور لوگوں کے پاخانے ڈالے جاتے ہیں؟ آپ  ﷺ  نے فرمایا:  پانی پاک ہے اسے کوئی چیز ناپاک نہیں کرتی ۔
ابوداؤد کہتے ہیں:
میں نے قتیبہ بن سعید سے سنا وہ کہہ رہے تھے: میں نے بئر بضاعہ کے متولی سے اس کی گہرائی کے متعلق سوال کیا، تو انہوں نے جواب دیا: پانی جب زیادہ ہوتا ہے تو زیر ناف تک رہتا ہے، میں نے پوچھا: اور جب کم ہوتا ہے؟ تو انہوں نے جواباً کہا: تو ستر یعنی گھٹنے سے نیچے رہتا ہے۔ ابوداؤد کہتے ہیں: میں نے بئر بضاعہ کو اپنی چادر سے ناپا، چادر کو اس پر پھیلا دیا، پھر اسے اپنے ہاتھ سے ناپا، تو اس کا عرض   (٦)   ہاتھ نکلا، میں نے باغ والے سے پوچھا، جس نے باغ کا دروازہ کھول کر مجھے اندر داخل کیا: کیا بئر بضاعہ کی بناوٹ و شکل میں پہلے کی نسبت کچھ تبدیلی ہوئی ہے؟ اس نے کہا: نہیں۔ ابوداؤد کہتے ہیں: میں نے دیکھا کہ پانی کا رنگ بدلا ہوا تھا۔  
تخریج دارالدعوہ:
(سنن الترمذی/الطھارة ٤٩ (٦٦)،
( سنن النسائی/المیاہ ١ (٣٢٧، ٣٢٨)،
(تحفة الأشراف: ٤١٤٤)،
(وقد أخرجہ: مسند احمد (٣/١٥، ١٦، ٣١، ٨٦) (صحیح  ) (صحیح  )  
وضاحت:
١ ؎: بئر بضاعہ:
مدینہ نبویہ میں مسجد نبوی سے جنوب مغرب میں واقع کنواں تھا، اس وقت یہ جگہ مسجد نبوی کی توسیع جدید میں مسجد کے اندر داخل ہوچکی ہے۔

📚جامع ترمذی
کتاب: طہارت جو مروی ہیں رسول اللہ  ﷺ  سے
باب: پانی کو کوئی چیز نا پاک نہیں کر تی
حدیث نمبر: 66
حَدَّثَنَا هَنَّادٌ، والحَسنُ بن علِيّ الْخَلالُ،‏‏‏‏ وَغَيْرُ وَاحِدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالُوا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ، عَنْ الْوَلِيدِ بْنِ كَثِيرٍ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ كَعْبٍ، عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ رَافِعِ بْنِ خَدِيجٍ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ، قَالَ:‏‏‏‏ قِيلَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ أَنَتَوَضَّأُ مِنْ بِئْرِ بُضَاعَةَ وَهِيَ بِئْرٌ يُلْقَى فِيهَا الْحِيَضُ وَلُحُومُ الْكِلَابِ وَالنَّتْنُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏  إِنَّ الْمَاءَ طَهُورٌ لَا يُنَجِّسُهُ شَيْءٌ . قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا حَسَنٌ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ جَوَّدَ أَبُو أُسَامَةَ هَذَا الْحَدِيثَ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمْ يَرْوِ أَحَدٌ حَدِيثَ أَبِي سَعِيدٍ فِي بِئْرِ بُضَاعَةَ أَحْسَنَ مِمَّا رَوَى أَبُو أُسَامَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ رُوِيَ هَذَا الْحَدِيثُ مِنْ غَيْرِ وَجْهٍ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏وَفِي الْبَاب عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ وَعَائِشَةَ.
ترجمہ:
ابو سعید خدری ؓ کہتے ہیں کہ  عرض کیا گیا: اللہ کے رسول! کیا ہم بضاعہ نامی کنویں سے وضو کریں اور حال یہ ہے وہ ایک ایسا کنواں ہے جس میں حیض کے کپڑے، کتوں کے گوشت اور بدبودار چیزیں آ کر گرتی ہیں؟۔ رسول اللہ  ﷺ  نے فرمایا:  پانی پاک ہے اسے کوئی چیز ناپاک نہیں کرتی
امام ترمذی کہتے ہیں:
  ١- یہ حدیث حسن ہے،
٢- بئر بضاعہ والی ابو سعید خدری کی یہ حدیث جس عمدگی کے ساتھ ابواسامہ نے روایت کی ہے کسی اور نے روایت نہیں کی ہے  ٣- یہ حدیث کئی اور طریق سے ابو سعید خدری ؓ سے مروی ہے،  ٤- اس باب میں ابن عباس اور عائشہ ؓ سے بھی احادیث آئی ہیں۔  
تخریج دارالدعوہ:
( سنن ابی داود/ الطہارة ٣٤ (٦٦)
( سنن النسائی/المیاہ ٢ (٣٢٧، ٣٢٨)
(تحفة الأشراف: ٤١٤٤)
مسند احمد (٣/١٥، ١٦، ٣١، ٨٦) (صحیح)
(سند میں عبید اللہ بن عبد اللہ رافع مجہول الحال ہیں، لیکن متابعات و شواہد کی بنا پر یہ حدیث صحیح ہے)  
قال الشيخ الألباني:  صحيح، المشکاة (478)، صحيح أبي داود (59)  
(صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني: حديث نمبر 66)

📚سنن نسائی
کتاب: پانیوں کا بیان
باب: بیئر بضاء سے متعلق
حدیث نمبر: 328
أَخْبَرَنَا الْعَبَّاسُ بْنُ عَبْدِ الْعَظِيمِ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْمَلِكِ بْنُ عَمْرٍو، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ مُسْلِمٍ وَكَانَ مِنْ الْعَابِدِينَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُطَرِّفِ بْنِ طَرِيفٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ خَالِدِ بْنِ أَبِي نَوْفٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَلِيطٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ مَرَرْتُ بِالنَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَهُوَ يَتَوَضَّأُ مِنْ بِئْرِ بُضَاعَةَ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ أَتَتَوَضَّأُ مِنْهَا وَهِيَ يُطْرَحُ فِيهَا مَا يُكْرَهُ مِنَ النَّتَنِ ؟ فَقَالَ:‏‏‏‏ الْمَاءُ لَا يُنَجِّسُهُ شَيْءٌ.
ترجمہ:
ابو سعید خدری ؓ کہتے ہیں کہ  میں نبی اکرم  ﷺ  کے پاس سے گزرا، آپ بئر بضاعہ کے پانی سے وضو کر رہے تھے، میں نے عرض کیا: کیا آپ اس سے وضو کر رہے ہیں حالانکہ اس میں تو ایسی بدبودار چیزیں ڈالی جاتی ہیں جو ناگوار ہوتی ہیں؟ تو آپ  ﷺ  نے فرمایا:  پانی کو کوئی چیز ناپاک نہیں کرتی ۔  
تخریج دارالدعوہ:
  تفرد بہ النسائی، (تحفة الأشراف ٤١٢٥)، مسند احمد ٣/ ١٥ (صحیح)
(متابعات اور شواہد سے تقویت پاکر یہ روایت بھی صحیح ہے، ورنہ اس کے راوی ” خالد ” ١ ؎ اور ” سلیط ” ٢ ؎
وضاحت ١ ؎: قال إبن حجر: ” مقبول ” من السادسة ٢ ؎: قال إبن حجر: ” مقبول ” من السادسة
(  قال الشيخ الألباني:  صحيح  
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 327)

وضاحت: 
*لیکن یہ اس وقت ہے جب پانی دو قلہ کی مقدار کو پہنچ گیا ہو، اور جب تک وہ اس کے رنگ، بو اور مزہ میں سے کسی وصف کو بدل نہ دے، اگر دو قلہ سے کم ہو تو نجاست پڑنے سے پانی ناپاک ہوجائے گا، اسی طرح اگر رنگ مزہ اور بو کو نجاست نے بدل دیا، تو گویا وہ پانی نہیں رہا، اور جب پانی نہیں رہا تو اس میں پاک ہونے اور پاک کرنے کی صفت باقی نہیں رہی کیونکہ یہ صفت پانی ہی کی ہے*

📚سنن ابوداؤد
کتاب: پاکی کا بیان
باب: پانی کے احکام
حدیث نمبر: 65 
حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا حَمَّادٌ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا عَاصِمُ بْنُ الْمُنْذِرِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبِي، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ إِذَا كَانَ الْمَاءُ قُلَّتَيْنِ فَإِنَّهُ لَا يَنْجُسُ، ‏‏‏‏‏‏
ترجمہ:
عبداللہ بن عمر ؓ کہتے ہیں کہ  رسول اللہ  ﷺ  نے فرمایا:  پانی جب دو قلہ کے برابر ہوجائے تو وہ ناپاک نہیں ہوگا ،

📚 جامع ترمذی
کتاب: طہارت جو مروی ہیں رسول اللہ  ﷺ  سے
حدیث نمبر: 67
حَدَّثَنَا هَنَّادٌ، حَدَّثَنَا عَبْدَةُ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ إِسْحَاق، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ جَعْفَرِ بْنِ الزُّبَيْرِ، عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ، عَنْ ابْنِ عُمَرَ، قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَهُوَ يُسْأَلُ عَنِ الْمَاءِ يَكُونُ فِي الْفَلَاةِ مِنَ الْأَرْضِ وَمَا يَنُوبُهُ مِنَ السِّبَاعِ وَالدَّوَابِّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏  إِذَا كَانَ الْمَاءُ قُلَّتَيْنِ لَمْ يَحْمِلِ الْخَبَثَ
. قَالَ عَبْدَةُ:‏‏‏‏ قَالَ مُحَمَّدُ بْنُ إِسْحَاق:‏‏‏‏ الْقُلَّةُ هِيَ:‏‏‏‏ الْجِرَارُ، ‏‏‏‏‏‏وَالْقُلَّةُ الَّتِي يُسْتَقَى فِيهَا. قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ وَهُوَ قَوْلُ الشَّافِعِيِّ،‏‏‏‏ وَأَحْمَدَ،‏‏‏‏ وَإِسْحَاق، ‏‏‏‏‏‏قَالُوا:‏‏‏‏ إِذَا كَانَ الْمَاءُ قُلَّتَيْنِ لَمْ يُنَجِّسْهُ شَيْءٌ مَا لَمْ يَتَغَيَّرْ رِيحُهُ أَوْ طَعْمُهُ،‏‏‏‏ وَقَالُوا:‏‏‏‏ يَكُونُ نَحْوًا مِنْ خَمْسِ قِرَبٍ.
ترجمہ:
عبداللہ بن عمر ؓ کہتے ہیں کہ  میں نے رسول اللہ  ﷺ  سے سنا، آپ سے اس پانی کے بارے میں پوچھا جا رہا تھا جو میدان میں ہوتا ہے اور جس پر درندے اور چوپائے آتے جاتے ہیں،(اس میں سے پانی پیتے اور پیشاب کرتے ہیں) تو آپ نے فرمایا:  جب پانی دو قلہ  ١ ؎ ہو تو وہ گندگی کو اثر انداز ہونے نہیں دے گا، اسے دفع کر دے گا   ٢ ؎۔
محمد بن اسحاق کہتے ہیں:
قلہ سے مراد گھڑے ہیں اور قلہ وہ  (ڈول)  بھی ہے جس سے کھیتوں اور باغات کی سینچائی کی جاتی ہے۔  
امام ترمذی کہتے ہیں: 
١- یہی قول شافعی، احمد اور اسحاق بن راہویہ کا ہے۔ ان لوگوں کا کہنا ہے کہ جب پانی دو قلہ ہو تو اسے کوئی چیز نجس نہیں کرسکتی جب تک کہ اس کی بویا مزہ بدل نہ جائے، اور ان لوگوں کا کہنا ہے کہ دو قلہ پانچ مشک کے قریب ہوتا ہے۔  
تخریج دارالدعوہ:
( سنن ابی داود/ الطہارة ٣٣ (٦٣)،
( سنن النسائی/الطہارة ٤٤ (٥٢)، والمیاہ ٢ (٣٢٩)، (سنن ابن ماجہ/الطہارة ٧٥ (٥١٧، ٥١٨) (تحفة الأشراف: ٧٣٠٥)، مسند احمد (١/١٢، ٢٦، ٣٨، ١٠٧)، سنن الدارمی/الطہارة ٥٥ (٧٥٨) (صحیح)  
وضاحت:
  ١ ؎: قلّہ کے معنی مٹکے کے ہیں، یہاں مراد قبیلہ ہجر کے مٹکے ہیں، کیونکہ عرب میں یہی مٹکے مشہور و معروف تھے، اس مٹکے میں ڈھائی سو رطل پانی سمانے کی گنجائش ہوتی تھی، لہٰذا دو قلوں کے پانی کی مقدار پانچ سو رطل ہوئی جو موجودہ زمانہ کے پیمانے کے مطابق دو کو ئنٹل ستائیس کلو گرام ہوتی ہے۔

٢ ؎: کچھ لوگوں نے «لم يحمل الخبث» کا ترجمہ یہ کیا ہے کہ نجاست اٹھانے سے عاجز ہوگا یعنی نجس ہوجائے گا، لیکن یہ ترجمہ دو اسباب کی وجہ سے صحیح نہیں، ایک یہ کہ ابوداؤد کی ایک صحیح روایت میں «اذابلغ الماء قلتین فإنہ لاینجس» ہے، یعنی: اگر پانی اس مقدار سے کم ہو تو نجاست گرنے سے ناپاک ہوجائے گا، چاہے رنگ مزہ اور بو نہ بدلے، اور اگر اس مقدار سے زیادہ ہو تو نجاست گرنے سے ناپاک نہیں ہوگا، الا یہ کہ اس کا رنگ، مزہ، اور بو بدل جائے، لہٰذا یہ روایت اسی پر محمول ہوگی اور «لم يحمل الخبث» کے معنی «لم ينجس» کے ہوں گے، دوسری یہ کہ «قلتين»  دو قلے  سے نبی اکرم ﷺ نے پانی کی تحدید فرما دی ہے اور یہ معنی لینے کی صورت میں تحدید باطل ہوجائے گی کیونکہ قلتین سے کم اور قلتین دونوں ایک ہی حکم میں آ جائیں گے۔  
قال الشيخ الألباني:  صحيح، ابن ماجة (517)  
(صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني: حديث نمبر 67)

*سلسلے کا خلاصہ*

*اوپر ذکر کردہ تمام احادیث اور محدثین کرام کی وضاحت سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ قلہ سے مراد مٹکے اور یہاں قبیلہ ہجر کے مٹکے مراد ہیں کیونکہ عرب میں یہی مٹکے مشہور و معروف تھے، اس مٹکے میں ڈھائی سو رطل پانی سمانے کی گنجائش ہوتی تھی،لہذا دو قلوں کے پانی کی مقدار پانچ سو رطل (پاونڈ) ہوئی، جو موجودہ زمانے کے حساب سے دو کوئنٹل ستائیس کلوگرام بنتی ہے,ایک کوئنٹل 100 کلو کا ہوتا ہے،لہذا یہ وزن 5 من 27 کلوگرام بنتا ہے*

*یعنی جب پانی 5 من 27 کلو سے کم ہو تو تھوڑی سی نجاست گرنے سے بھی وہ ناپاک ہو جاتا ہے، چاہے اسکا ذائقہ یا رنگ تبدیل نا بھی ہو اور اس سے وضو وغیرہ نہیں کر سکتے*

*اور اگر پانی 5 من 27 کلو گرام سے زیادہ ہو اور اس میں اس قدر نجاست گرے جس سے  اسکا رنگ یا ذائقہ تبدیل ہو جائے یا اس پانی سے بو آنا شروع ہو جائے تو اس وقت وہ پانی ہی نہیں رہے گا اور ناپاک ہو جائے گا، اور جب وہ پانی ہی نہیں رہا اور خود ناپاک محلول بن گیا تو وہ دوسرے کو پاک کیسے کر سکتا ہے*

*لیکن اگر کسی جگہ پانی 5 من 27 کلو گرام جتنا یا اس سے زیادہ ہو اور نجاست گرنے سے اسکا رنگ،ذائقہ یا بو تبدیل نہ ہو تو پھر وہ پانی پاک ہو گا اور اس کو وضو وغیرہ کے لئے استعمال کیا جا سکتا ہے،*

📒اس مسئلہ پر علماء کا اجماع ہے۔۔!
ﻗَﺎﻝَ ﺃَﺑُﻮ ﺣَﺎﺗِﻢٍ:
ﻗَﻮْﻟُﻪُ ﺻَﻠَّﻰ اﻟﻠَّﻪُ ﻋَﻠَﻴْﻪِ ﻭَﺳَﻠَّﻢَ:
«اﻟْﻤَﺎءُ ﻻَ ﻳُﻨَﺠِّﺴُﻪُ ﺷَﻲْءٌ» ﻟَﻔْﻈَﺔٌ ﺃُﻃْﻠِﻘَﺖْ ﻋَﻠَﻰ اﻟْﻌُﻤُﻮﻡِ ﺗُﺴْﺘَﻌْﻤَﻞُ ﻓِﻲ ﺑَﻌْﺾِ اﻷَْﺣْﻮَاﻝِ، ﻭَﻫُﻮَ اﻟْﻤِﻴَﺎﻩُ اﻟْﻜَﺜِﻴﺮَﺓُ اﻟَّﺘِﻲ ﻻَ ﺗَﺤْﺘَﻤِﻞُ اﻟﻨَّﺠَﺎﺳَﺔَ، ﻓَﺘَﻄْﻬُﺮُ ﻓِﻴﻬَﺎ، ﻭَﺗَﺨُﺺُّ ﻫَﺬِﻩِ اﻟﻠَّﻔْﻈَﺔَ اﻟَّﺘِﻲ ﺃُﻃْﻠِﻘَﺖْ ﻋَﻠَﻰ اﻟْﻌُﻤُﻮﻡِ ﻭُﺭُﻭﺩُ ﺳُﻨَّﺔٍ ﻭَﻫُﻮَ ﻗَﻮْﻟُﻪُ ﺻَﻠَّﻰ اﻟﻠَّﻪُ ﻋَﻠَﻴْﻪِ ﻭَﺳَﻠَّﻢَ: «ﺇِﺫَا ﻛَﺎﻥَ اﻟْﻤَﺎءُ ﻗُﻠَّﺘَﻴْﻦِ ﻟَﻢْ ﻳُﻨَﺠِّﺴْﻪُ ﺷَﻲْءٌ» ﻭَﻳَﺨُﺺَّ ﻫَﺬَﻳْﻦِ اﻟْﺨَﺒَﺮَﻳْﻦِ اﻹِْﺟْﻤَﺎﻉُ ﻋَﻠَﻰ ﺃَﻥَّ اﻟْﻤَﺎءَ ﻗَﻠِﻴﻼً ﻛَﺎﻥَ ﺃَﻭْ ﻛَﺜِﻴﺮًا ﻓَﻐَﻴَّﺮَ ﻃَﻌْﻤَﻪُ ﺃَﻭْ ﻟَﻮْﻧَﻪُ ﺃَﻭْ ﺭِﻳﺤَﻪُ ﻧَﺠَﺎﺳَﺔٌ ﻭَﻗَﻌَﺖْ ﻓِﻴﻪِ ﺃَﻥَّ ﺫَﻟِﻚَ اﻟْﻤَﺎءَ ﻧَﺠِﺲٌ ﺑِﻬَﺬَا اﻹِْﺟْﻤَﺎﻉِ اﻟَّﺬِﻱ ﻳَﺨُﺺُّ ﻋُﻤُﻮﻡَ ﺗِﻠْﻚَ اﻟﻠَّﻔْﻈَﺔِ اﻟْﻤُﻄْﻠَﻘَﺔِ اﻟَّﺘِﻲ ﺫَﻛَﺮْﻧَﺎﻫَﺎ __________
اسکا خلاصہ بھی وہی ہے جو اوپر ہم بیان کر چکے،

دیکھیے۔۔!
(صحیح ابن حبان، حدیث نمبر_1249/تحت الحدیث)
(سبل السلام،ج1/ص44)

*نوٹ واضح رہے کہ دریا ،سمندر یا نہروں وغیرہ کا پانی تو پانچ من 27 کلو سے زیادہ ہی ہوتا ہے لہذا وہ بھی تھوڑی بہت نجاست گرنے سے ناپاک نہیں ہوتا، اور نہروں یا دریاؤں وغیرہ کا پانی جسکا رنگ یا ذائقہ مٹی کیوجہ سے تبدیل ہو جاتا وہ ناپاک نہیں ہو گا، بلکہ پانی ناپاک تب ہوتا جب نجاست یعنی گندگی وغیرہ کیوجہ سے اسکا رنگ بو یا ذائقہ تبدیل ہو جائے*

((واللہ تعالیٰ اعلم باالصواب))

📚[[ اگر کتا کسی برتن مین منہ ڈال دے تو کیا وہ پانی یا دودھ وغیرہ پینا جائز ہے؟ اور ایسے برتن کو پاک کیسے کریں گے؟]]
(جواب کے لئے دیکھیں _سلسلہ نمبر_10)

📲اپنے موبائل پر خالص قرآن و حدیث کی روشنی میں مسائل حاصل کرنے کے لیے “ADD” لکھ کر نیچے دیئے گئے نمبر پر سینڈ کر دیں،

📩آپ اپنے سوالات نیچے دیئے گئے نمبر پر واٹس ایپ کر سکتے ہیں جنکا جواب آپ کو صرف قرآن و حدیث کی روشنی میں دیا جائیگا,
ان شاءاللہ۔۔!!

⁦ 
📖 سلسلہ کے باقی سوال جواب پڑھنے کیلیئے ہماری آفیشل ویب سائٹ وزٹ کریں

یا ہمارا فیسبک پیج دیکھیں::

یا سلسلہ نمبر بتا کر ہم سے طلب کریں۔۔!!

*الفرقان اسلامک میسج سروس*

آفیشل واٹس ایپ نمبر
                   +923036501765

آفیشل ویب سائٹ
https://alfurqan.info/

آفیشل فیسبک پیج//
https://www.facebook.com/Alfurqan.sms.service2/

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں