590

سوال_کیا مردار کا چمڑا اتارنا جائز ہے؟ اور اسے استعمال کر سکتے ہیں؟ اور حرام جانوروں کی کھال سے بنی مصنوعات کا کیا حکم ہے؟

“سلسلہ سوال و جواب نمبر-25″
سوال_کیا مردار کا چمڑا اتارنا جائز ہے؟ اور اسے استعمال کر سکتے ہیں؟ نیز حرام جانوروں کی کھال سے بنی مصنوعات کا کیا حکم ہے؟

Published Date: 17-1-2018

جواب۔۔۔۔!!
الحمدللہ۔۔۔۔۔۔!!

*دین اسلام میں حلال مردار جانوروں کی کھال اتارنا اور دباغت کے بعد انکو استعمال کرنا جائز ہے*

*کچے چمڑے پر بال ،خون اور غلاظت وغیرہ لگی ہوتی ہے اسکو صاف کر کے پکانے کو عربی میں دباغت کہتے ہیں*

📚صحیح بخاری
کتاب: خرید وفروخت کے بیان
باب: دباغت سے پہلے مردار کی کھال (کا بیچنا جائز ہے یا نہیں؟)۔
حدیث نمبر: 2221
حَدَّثَنَا زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبِي ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ صَالِحٍ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي ابْنُ شِهَابٍ ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ عُبَيْدَ اللَّهِ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ أَخْبَرَهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عَبَّاسٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ أَخْبَرَهُ:‏‏‏‏ أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مَرَّ بِشَاةٍ مَيِّتَةٍ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ هَلَّا اسْتَمْتَعْتُمْ بِإِهَابِهَا ؟ قَالُوا:‏‏‏‏ إِنَّهَا مَيِّتَةٌ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ إِنَّمَا حَرُمَ أَكْلُهَا
ترجمہ:
ہم سے زہیر بن حرب نے بیان کیا، کہا کہ ہم سے یعقوب بن ابراہیم نے بیان کیا، ان سے ان کے باپ نے بیان کیا، ان سے صالح نے بیان کیا، کہ مجھ سے ابن شہاب نے بیان کیا، انہیں عبیداللہ بن عبداللہ نے خبر دی اور انہیں عبداللہ بن عباس ؓ نے خبر دی کہ  رسول اللہ  ﷺ  کا گزر ایک مردہ بکری پر ہوا۔ آپ  ﷺ  نے فرمایا کہ اس کے چمڑے سے تم لوگوں نے کیوں نہیں فائدہ اٹھایا؟ صحابہ نے عرض کیا، کہ وہ تو مردار ہے۔ آپ  ﷺ  نے فرمایا کہ مردار کا صرف کھانا منع ہے۔

📚صحیح مسلم
کتاب: حیض کا بیان
باب: مردار کی کھال رنگ دینے سے پاک ہوجانے کے بیان میں
حدیث نمبر: 363
حَدَّثَنَا يَحْيَی بْنُ يَحْيَی وَأَبُو بَکْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَعَمْرٌو النَّاقِدُ وَابْنُ أَبِي عُمَرَ جَمِيعًا عَنْ ابْنِ عُيَيْنَةَ قَالَ يَحْيَی أَخْبَرَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ عَنْ الزُّهْرِيِّ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ قَالَ تُصُدِّقَ عَلَی مَوْلَاةٍ لِمَيْمُونَةَ بِشَاةٍ فَمَاتَتْ فَمَرَّ بِهَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ هَلَّا أَخَذْتُمْ إِهَابَهَا فَدَبَغْتُمُوهُ فَانْتَفَعْتُمْ بِهِ فَقَالُوا إِنَّهَا مَيْتَةٌ فَقَالَ إِنَّمَا حَرُمَ أَکْلُهَا قَالَ أَبُو بَکْرٍ وَابْنُ أَبِي عُمَرَ فِي حَدِيثِهِمَا عَنْ مَيْمُونَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهَا
ترجمہ:
یحییٰ بن یحیی، ابوبکر بن ابی شیبہ، عمرو ناقد، ابن ابی عمر، ابن عیینہ، یحیی، سفیان بن عیینہ، زہری، عبیداللہ بن عبداللہ، ابن عباس ؓ سے روایت ہے کہ ام المومنین سیدہ میمونہ ؓ کی آزاد کردہ لونڈی کو ایک بکری کا صدقہ دیا گیا وہ مرگئی رسول اللہ ﷺ کا اس پر سے گزر ہوا تو فرمایا تم نے اس کی کھال کیوں نہ اتار لی تم اس کو رنگ کر کے اس سے نفع اٹھاتے انہوں نے کہا یہ تو مردار ہے آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا صرف اس کا کھانا حرام کیا گیا ہے۔

📚سنن نسائی
کتاب: فرع اور عتیرہ سے متعلق احادیث مبارکہ
باب: مردار کی کھال سے متعلق
حدیث نمبر: 4242
أَخْبَرَنِي الرَّبِيعُ بْنُ سُلَيْمَانَ بْنِ دَاوُدَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْحَاق بْنُ بَكْرٍ وَهُوَ ابْنُ مُضَرَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبِي، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَعْفَرِ بْنِ رَبِيعَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا الْخَيْرِ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ وَعْلَةَ أَنَّهُ سَأَلَ ابْنَ عَبَّاسٍ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنَّا نَغْزُو هَذَا الْمَغْرِبَ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّهُمْ أَهْلُ وَثَنٍ وَلَهُمْ قِرَبٌ يَكُونُ فِيهَا اللَّبَنُ وَالْمَاءُ. فَقَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ:‏‏‏‏ الدِّبَاغُ طَهُورٌ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ ابْنُ وَعْلَةَ:‏‏‏‏ عَنْ رَأْيِكَ أَوْ شَيْءٌ سَمِعْتَهُ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ بَلْ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ.
ترجمہ:
عبدالرحمٰن بن وعلہ کہتے ہیں کہ  انہوں نے ابن عباس ؓ سے پوچھا: ہم لوگ مغرب کے علاقہ میں جہاد کو جا رہے ہیں، وہاں کے لوگ بت پرست ہیں، ان کے پاس مشکیں ہیں جن میں دودھ اور پانی ہوتا ہے؟ ابن عباس ؓ نے کہا: دباغت کی ہوئی کھالیں پاک ہوتی ہیں۔ عبدالرحمٰن بن وعلہ نے کہا: یہ آپ کا خیال ہے یا کوئی بات آپ نے رسول اللہ  ﷺ  سے سنی ہے۔ ؟
انہوں نے کہا: بلکہ رسول اللہ  ﷺ  سے   (سنی)   ہے۔  
تخریج دارالدعوہ: 
قال الشيخ الألباني:  صحيح الإسناد  
(صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 4242)

📚سنن نسائی
کتاب: فرع اور عتیرہ سے متعلق احادیث مبارکہ
باب: مردار کی کھال سے متعلق
حدیث نمبر: 4243
أَخْبَرَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُعَاذُ بْنُ هِشَامٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبِي، ‏‏‏‏‏‏عَنْ قَتَادَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْحَسَنِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَوْنِ بْنِ قَتَادَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَلَمَةَ بْنِ الْمُحَبِّقِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ نَبِيَّ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي غَزْوَةِ تَبُوكَ دَعَا بِمَاءٍ مِنْ عِنْدِ امْرَأَةٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ مَا عِنْدِي إِلَّا فِي قِرْبَةٍ لِي مَيْتَةٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَلَيْسَ قَدْ دَبَغْتِهَا، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ بَلَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَإِنَّ دِبَاغَهَا ذَكَاتُهَا.
ترجمہ:
سلمہ بن محبق ؓ سے روایت ہے کہ  نبی اکرم  ﷺ  نے غزوہ تبوک میں ایک عورت کے پاس سے پانی منگوایا۔ اس نے کہا: میرے پاس تو ایک ایسی مشک کا پانی ہے جو مردار کی کھال کی ہے، آپ نے فرمایا:  تم نے اسے دباغت نہیں دی تھی؟   وہ بولی: کیوں نہیں، آپ  ﷺ  نے فرمایا:  اس کی دباغت ہی اس کی پاکی ہے ۔  
تخریج دارالدعوہ: 
سنن ابی داود/اللباس ٤١ (4125)
(تحفة الأشراف: ٤٥٦٠)،
مسند احمد (٣/٤٧٦ و ٥/٦، ٧) (صحیح  )  
قال الشيخ الألباني:  صحيح  
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 4243

📚سنن نسائی
کتاب: فرع اور عتیرہ سے متعلق احادیث مبارکہ
باب: مردار کی کھال کس چیز سے دباغت دی جائے؟
حدیث نمبر: 4248
أَخْبَرَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ دَاوُدَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ وَهْبٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي عَمْرُو بْنُ الْحَارِثِ، ‏‏‏‏‏‏وَاللَّيْثُ بْنُ سَعْدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ كَثِيرِ بْنِ فَرْقَدٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّعَبْدَ اللَّهِ بْنَ مَالِكِ بْنِ حُذَافَةَ حَدَّثَهُ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْعَالِيَةِ بِنْتِ سُبَيْعٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ مَيْمُونَةَ زَوْجَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ حَدَّثَتْهَا، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ مَرَّ بِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رِجَالٌ مِنْ قُرَيْشٍ يَجُرُّونَ شَاةً لَهُمْ مِثْلَ الْحِصَانِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لَهُمْ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَوْ أَخَذْتُمْ إِهَابَهَا، ‏‏‏‏‏‏قَالُوا:‏‏‏‏ إِنَّهَا مَيْتَةٌ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ يُطَهِّرُهَا الْمَاءُ وَالْقَرَظُ.
ترجمہ:
ام المؤمنین میمونہ ؓ بیان کرتی ہیں کہ  رسول اللہ  ﷺ  کے پاس سے قریش کے کچھ لوگ گزرے، وہ اپنی ایک بکری کو گدھے کی طرح گھسیٹ رہے تھے، ان سے رسول اللہ  ﷺ  نے فرمایا:  اگر تم لوگ اس کی کھال رکھ لیتے   (تو بہتر ہوتا) ، انہوں نے کہا: وہ مردار ہے، رسول اللہ  ﷺ  نے فرمایا:  اسے پانی اور سلم درخت کا پتا   (جس سے دباغت دی جاتی ہے)   پاک کردیتے ہیں   ١ ؎۔  
تخریج دارالدعوہ: 
سنن ابی داود/اللباس ٤١ (٤١٢٦)، (تحفة الأشراف: ١٨٠٨٤)،
مسند احمد (٦/٣٣٣، ٣٣٤) (صحیح  )  
وضاحت: ١ ؎: یہ ضروری نہیں کہ ہمارے زمانہ میں بھی دباغت کے لیے پانی کے ساتھ ساتھ اس دور کے کانٹے دار درخت ہی کا استعمال کیا جائے، موجودہ ترقی یافتہ زمانہ میں جس پاک چیز سے بھی دباغت دی جائے مقصد حاصل ہوگا لیکن اس کے ساتھ پانی کا استعمال ضروری ہے (قرظ: ایک سلم نامی کانٹے دار درخت کے پتے) ۔  
قال الشيخ الألباني:  صحيح  
(صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 4248)

📚سنن نسائی
کتاب: فرع اور عتیرہ سے متعلق احادیث مبارکہ
باب: مردار کی کھال کس چیز سے دباغت دی جائے؟
حدیث نمبر: 4254
أَخْبَرَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ مَسْعُودٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا بِشْرٌ يَعْنِي ابْنَ الْمُفَضَّلِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْحَكَمِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ أَبِي لَيْلَى، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُكَيْمٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُرِئَ عَلَيْنَا كِتَابُ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏وَأَنَا غُلَامٌ شَابٌّ:‏‏‏‏ أَنْ لَا تَنْتَفِعُوا مِنَ الْمَيْتَةِ بِإِهَابٍ وَلَا عَصَبٍ.
ترجمہ:
عبداللہ بن عکیم جہنی کہتے ہیں کہ  ہمیں رسول اللہ  ﷺ  کا مکتوب گرامی پڑھ کر سنایا گیا   (اس وقت میں ایک نوخیز لڑکا تھا)   کہ تم لوگ مردے کی بغیر دباغت کی ہوئی کھال یا پٹھے سے فائدہ مت اٹھاؤ ١؎۔  
تخریج دارالدعوہ: 
سنن ابی داود/اللباس ٤٢ (٤١٢٧)،
سنن الترمذی/اللباس ٧ (١٧٢٧)،
سنن ابن ماجہ/اللباس ٢٦ (٣٦١٣)،
(تحفة الأشراف: ٦٦٤٢)،
مسند احمد (٤/٣١٠، ٣١١)،
ویأتي عند المؤلف بأرقام: ٤٢٥٥، ٤٢٥٦) (صحیح) (الإرواء ٣٨، وتراجع الالبانی ٤٧٠  )
  
وضاحت: ١ ؎:
بعض لوگوں نے اس حدیث کو ناسخ، اور ابن عباس اور میمونہ ؓ کی حدیثوں کو منسوخ قرار دیا ہے کیونکہ یہ مکتوب آپ کی وفات سے چھ ماہ پہلے کا ہے، لیکن جمہور محدثین نے اس کے برخلاف پچھلی حدیثوں کو ہی سند کے لحاظ سے زیادہ صحیح ہونے کی بنیاد پر راجح قرار دیا ہے، صحیح بات یہ ہے کہ دونوں حدیثوں میں کوئی تضاد نہیں، پچھلی حدیثوں میں جو مردار کے چمڑے سے نفع اٹھانے کی اجازت ہے وہ دباغت کے بعد ہے، اور (مخضرم راوی) عبداللہ بن عکیم کی حدیث میں جو ممانعت ہے وہ دباغت سے پہلے کی ہے (دیکھئیے اگلی حدیث) امام ابوداؤد (رح) نے اس حدیث کے بعد نضر بن سہیل سے نقل کیا ہے کہ إہاب دباغت سے پہلے والے چمڑے کو کہتے ہیں، اور دباغت کے بعد چمڑے کو شف یا قرب ۃ  کہتے ہیں۔  
قال الشيخ الألباني:  صحيح  
(صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 4249)

📚سنن نسائی
کتاب: فرع اور عتیرہ سے متعلق احادیث مبارکہ
باب: مردار کی کھال سے متعلق
حدیث نمبر: 4250
أَخْبَرَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ سَعْدِ بْنِ إِبْرَاهِيمَ بْنِ سَعْدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَمِّي، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شَرِيكٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْأَعْمَشِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْإِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْأَسْوَدِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَائِشَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ سُئِلَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ جُلُودِ الْمَيْتَةِ ؟، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ دِبَاغُهَا ذَكَاتُهَا.
ترجمہ:
ام المؤمنین عائشہ ؓ کہتی ہیں کہ  رسول اللہ  ﷺ  سے مردے کی کھالوں کے بارے میں سوال کیا گیا، تو آپ نے فرمایا:  اس کی دباغت ہی اس کی پاکی ہے ۔  
تخریج دارالدعوہ:
تفرد بہ النسائي (تحفة الأشراف: ١٥٩٦٦)، ویأتي عند المؤلف بأرقام: ٤٢٥١، ٤٢٥٢) (صحیح  )  
قال الشيخ الألباني:  صحيح  
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 4245

📚جامع ترمذی
کتاب: لباس کا بیان
باب: دباغت کے بعد مردار جانور کی کھال
حدیث نمبر: 1728
حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ، وَعَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ مُحَمَّدٍ، عَنْ زَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ وَعْلَةَ، عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ، قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏  أَيُّمَا إِهَابٍ دُبِغَ فَقَدْ طَهُرَ ، ‏‏‏‏‏‏وَالْعَمَلُ عَلَى هَذَا عِنْدَ أَكْثَرِ أَهْلِ الْعِلْمِ قَالُوا فِي جُلُودِ الْمَيْتَةِ:‏‏‏‏ إِذَا دُبِغَتْ فَقَدْ طَهُرَتْ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔انتہی.! ‏‏‏
ترجمہ:
عبداللہ بن عباس ؓ کہتے ہیں کہ  رسول اللہ  ﷺ  نے فرمایا:  جس چمڑے کو دباغت دی گئی، وہ پاک ہوگیا  ١ ؎۔  
امام ترمذی کہتے ہیں: 
١ – ابن عباس ؓ کی حدیث حسن صحیح ہے،  ٢ – بواسطہ ابن عباس نبی اکرم  ﷺ  سے دوسری سندوں سے بھی اسی طرح مروی ہے،  ٣ – یہ حدیث ابن عباس سے کبھی میمونہ کے واسطہ سے نبی اکرم  ﷺ  سے اور کبھی سودہ کے واسطہ سے نبی اکرم  ﷺ  سے آئی ہے،  ٤ – میں نے محمد بن اسماعیل بخاری کو نبی اکرم  ﷺ  سے مروی ابن عباس کی حدیث اور میمونہ کے واسطہ سے مروی ابن عباس کی حدیث کو صحیح کہتے ہوئے سنا، انہوں نے کہا: احتمال ہے کہ ابن عباس نے بواسطہ میمونہ نبی اکرم  ﷺ  سے روایت کیا ہو، اور ابن عباس نے نبی اکرم  ﷺ  سے براہ راست بھی روایت کیا، اکثر اہل علم کا اسی پر عمل ہے، سفیان ثوری، ابن مبارک، شافعی، احمد اور اسحاق بن راہویہ کا یہی قول ہے،  ٥ – نضر بن شمیل نے بھی اس کا یہی مفہوم بیان کیا ہے، اسحاق بن راہویہ کہتے ہیں: نضر بن شمیل نے کہا: «إهاب» اس جانور کے چمڑے کو کہا جاتا ہے، جس کا گوشت کھایا جاتا ہے،  ٦ – اکثر اہل علم کا اسی پر عمل ہے، وہ کہتے ہیں: مردار کا چمڑا دباغت دینے کے بعد پاک ہوجاتا ہے ،  ٧ – شافعی کہتے ہیں: کتے اور سور کے علاوہ جس مردار جانور کا چمڑا دباغت دیا جائے وہ پاک ہوجائے گا، انہوں نے اسی حدیث سے استدلال کیا ہے،  ٨ – بعض اہل علم صحابہ اور دوسرے لوگوں نے درندوں کے چمڑوں کو مکروہ سمجھا ہے، اگرچہ اس کو دباغت دی گئی ہو، عبداللہ بن مبارک، احمد اور اسحاق بن راہویہ کا یہی قول ہے، ان لوگوں نے اسے پہننے اور اس میں نماز ادا کرنے کو برا سمجھا ہے،  ٩ – اسحاق بن ابراہیم بن راہویہ کہتے ہیں: رسول اللہ  ﷺ  کے قول «أيما إهاب دبغ فقد طهر» کا مطلب یہ ہے کہ اس جانور کا چمڑا دباغت سے پاک ہوجائے گا جس کا گوشت کھایا جاتا ہے،  ١٠ – اس باب میں سلمہ بن محبق، میمونہ اور عائشہ ؓ سے بھی احادیث آئی ہیں۔  
تخریج دارالدعوہ:
صحیح مسلم/الحیض ٢٧ (٣٦٦)،
سنن ابی داود/ اللباس ٤١ (٤١٢٣)،
سنن النسائی/الفرع ٤ (٤٢٤٦)،
سنن ابن ماجہ/اللباس ٢٥ (٣٦٠٩)،
(تحفة الأشراف: ٥٨٢٢)،
وط/الصید ٦ (١٧)، و مسند احمد (١/٢١٩، ٢٧٠، ٢٧٩، ٢٨٠، ٣٤٣) (صحیح  ) 

*اس حدیث سے معلوم ہوا کہ ہر چمڑا جسے دباغت دیا گیا ہو وہ پاک ہے، لیکن اس عموم سے درندوں،اور حرام جانوروں کی کھالیں نکل جائیں گی،انکی تفصیل آگے آ رہی ہے*

*اوپر ذکر کردہ تمام احادیث سے یہ بات سمجھ آئی کہ حلال جانور چاہے ذبح کے بغیر مر جائے تو اس کے چمڑے کو (دباغت دینے)رنگنے سے چمڑا پاک ہو جاتا ہے، اور وہ استعمال میں بھی لایا جا سکتا ہے،*

__________&___________

*رہی بات حرام جانور کے چمڑے کی تو کچھ علماء کہتے ہیں کہ خنزیر کے علاوہ حرام جانور کا چمڑہ بھی رنگنے کے ںعد استعمال کر سکتے ہیں، لیکن اکثر علماء اسکی اجازت نہیں دیتے*

📚سنن نسائی
کتاب: فرع اور عتیرہ سے متعلق احادیث مبارکہ
باب: درندوں کی کھالوں سے نفع حاصل کرنے کی ممانعت
حدیث نمبر: 4255
أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عُثْمَانَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا بَقِيَّةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ بَحِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ خَالِدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَفَدَ الْمِقْدَامُ بْنُ مَعْدِي كَرِبَ عَلَى مُعَاوِيَةَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لَهُ:‏‏‏‏ أَنْشُدُكَ بِاللَّهِ،‏‏‏‏ هَلْ تَعْلَمُأَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنْ لُبُوسِ جُلُودِ السِّبَاعِ، ‏‏‏‏‏‏وَالرُّكُوبِ عَلَيْهَا ؟، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ.
ترجمہ:
خالد بن معدان کہتے ہیں کہ  مقدام بن معد یکرب ؓ معاویہ ؓ کے پاس آئے اور ان سے کہا کہ میں آپ کو اللہ کی قسم دلاتا ہوں۔ کیا آپ جانتے ہیں کہ رسول اللہ  ﷺ  نے درندوں کی کھالوں کے لباس پہننے اور ان پر سوار ہونے سے منع فرمایا ہے؟ انہوں نے کہا: ہاں،
تخریج دارالدعوہ:  
قال الشيخ الألباني:  صحيح  
(صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 4255)
(سنن ترمذی حدیث نمبر -1771)
(سنن ابو داؤد حدیث نمبر-4132)

یہ حدیث عام ہے، اس لیے درندوں کی کھالیں مدبوغ (پکائی ہوئی) ہوں یا غیر مدبوغ (بلا پکائی ہوئی) دونوں کا استعمال ممنوع ہے، یہ حدیث «كل إهاب دبغ فقد طهر» کے لیے مخص ہے۔ یعنی (ہر پکا ہوا چمڑا پاک ہے) کا مطلب یہ ہے کہ جو حلال اور مذبوح جانور کا چمڑا ہو، لیکن اگر درندوں کا چمڑا پکا ہوا ہو تب بھی اس کا استعمال حرام ہے،

📒اسکی حرمت کی وجہ بیان کرتے ہوئے بعض علماء فرماتے ہیں کہ درندوں کے چمڑے عموماََ متکبر لوگ استعمال کرتے ہیں، اس لیے ان کے استعمال سے منع فرمایا جس طرح مسلمان مردوں کو سونے اور ریشم کے استعمال سے منع فرمایا گیا ہے،

📒بعض کہتے ہیں کہ شیر اور چیتے وغیرہ کا چمڑا عام استعمال میں تھا۔ ممکن ہے دباغت کے بغیر استعمال کیا گیا ہو لیکن یہ مرجوع احتمال ہے،

📒اور بعض علمائے کرام یہ بھی فرماتے ہیں کہ چونکہ درندے حرام ہیں، اس لیے انکی کھال استعمال کرنا بھی ممنوع ہے وہ بھلے دباغت سے پہلے استعمال کریں یا بعد میں،

_________&__________

سعودی فتاویٰ ویبسائٹ الاسلام سوال و جواب پر حرام جانوروں کے چمڑے کے متعلقہ فتویٰ ملاحظہ فرمائیں.!

سوال
چمڑا كے استعمال ميں كيا اصول ہے، چمڑا چاہے اس جانور كا ہو جس كا گوشت كھايا جاتا ہے، يا كسى اور جانور كا، چاہے ذبح كيا گيا ہو يا ذبح نہ كيا گيا ہو ؟

جواب:
الحمد للہ:

وہ جانور جو ذبح كرنے سے حلال ہو جاتے ہيں ان كا چمڑا پاك اور طاہر ہے، كيونكہ وہ ذبح كرنے سے پاك ہو گئے ہيں، مثلا اونٹ، گائے، بكرى، ہرن، خرگوش وغيرہ كا چمڑا، چاہے اس چمڑا كو دباغت دى گئى ہو يا نہ دى گئى ہو.
ليكن جن جانوروں كا گوشت نہيں كھايا جاتا مثلا كتے، بھيڑيے، شير، اور ہاتھى وغيرہ كا چمڑا تو يہ نجس ہے، چاہے اسے ذبح كيا گيا ہو يا مر گيا، يا پھر مارا گيا ہو، اس ليے كہ اگر اسے ذبح بھى كر ليا جائے تو يہ نہ تو حلال ہوتا ہے، اور نہ ہى پاك، بلكہ يہ نجس ہى رہےگا، چاہے اسے دباغت دى گئى ہو يا پھر دباغت نہ دى گئى ہے، راجح قول يہى ہے.
كيونكہ راجح قول يہ ہے كہ اگر ذبح كرنے سے جانور حلال نہ ہوتا ہو تو چمڑے كى نجاست دباغت دينے سے پاك نہيں ہوتى.
اور ذبح كيے جانے والے مرے ہوئے جانور كا چمڑا يعنى اگر وہ جانور اپنى موت خود ہى مر جائے اور ذبح نہ كيا گيا ہو تو اس كا چمڑا دباغت دينے سے پاك ہو جاتى ہے، ليكن دباغت دينے سے قبل نجس ہے.

چنانچہ چمڑے كى تين اقسام ہوئيں:

پہلى قسم:
طاہر اور پاك، چاہے اسے دباغت دى جائے يا نہ دى جائے، يہ ان جانوروں كا چمڑا ہے جو ذبح كيے گئے ہوں اور جن كا گوشت كھايا جاتا ہے.

دوسرى قسم:
ايسے چمڑے جو نہ تو دباغت سے پہلے پاك ہوتے ہيں، اور نہ ہى دباغت كے بعد، بلكہ يہ نجس ہيں.
يہ ان جانوروں كے چمڑے ہيں جن كا گوشت نہيں كھايا جاتا، مثلا خنزير.

تيسرى قسم:
ايسے چمڑے جو دباغت سے قبل پاك نہيں بلكہ دباغت كے بعد پاك ہو جاتے ہيں.
يہ ان جانوروں كے چمڑے ہيں جن كا گوشت كھايا جاتا ہے، ليكن بغير ذبح كيے مر گئے ہوں.
واللہ اعلم .
(ماخذ: ديكھيں: لقاء الباب المفتوح ابن عثيمين ( 52 / 39 )

_____________&_____________

سوال_خنزير كے چمڑے كى جيكٹ وغيرہ پہننے كا حكم كيا ہے ؟

جواب:
الحمد للہ:

نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم سے ثابت ہے كہ آپ نے فرمايا:
” جب چمڑے كو دباغت دى جائے تو وہ پاك ہو جاتا ہے ”
اور ايك حديث ميں نبى صلى اللہ عليہ وسلم نے فرمايا:
” مرے ہوئے جانور كے چمڑے كو دباغت دينا اس كى پاكيزگى ہے ”
ليكن علماء كرام كا اس ميں اختلاف ہے كہ آيا يہ حديث ہر قسم كے چمڑے كے ليے عام ہے يا نہيں ؟
يا كہ صرف ان جانوروں كے چمڑے كے ساتھ خاص ہے جو ذبح كرنے سے حلال ہو جاتے ہيں ؟
اس ميں كوئى شك و شبہ نہيں كہ جو جانور ذبح كرنے سے حلال ہو جاتے ہيں مثلا گائے اونٹ بكرى وغيرى ميں سے مرے ہوئے جانور كے چمڑے كى دباغت كى جائے تو علماء كرام كے صحيح قول كے مطابق ہر چيز ميں اس كا استعمال جائز ہے.
ليكن خنزير اور كتے وغيرہ جو ذبح كرنے سے حلال نہيں ہوتے ان جانوروں كے چمڑے كو دباغت دينے كے بعد اس كى پاكيزگى ميں اختلاف پايا جاتا ہے، اور احتياط اسى ميں ہے كہ نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم كے درج ذيل فرمان پر عمل كرتے ہوئے اسے استعمال نہ كيا جائے.
نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم كا فرمان ہے:
” جو شخص شبہات سے بچ گيا اس نے اپنا دين بھى محفوظ كر ليا اور اپنى عزت بھى محفوظ كر لى ”
اور نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم كا فرمان ہے:
” جس ميں شك ہو اسے چھوڑ كر بغير شك والى چيز كو اختيار كر لو ”

(ماخذ: الشيخ ابن باز رحمہ اللہ. ديكھيں فتاوى الجامعۃ للمراۃ المسلمۃ ( 3 / 860 )

*لہذٰا احتیاط اسی میں ہے کہ جس چیز بارے پتا ہو کہ یہ حرام اور نجس جانور کے چمڑے سے بنی ہے، اسکو استعمال نہ کریں،*

📚کیونکہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا
(فمن التقيٰ الشبهات  استباء لدينه وعرضه )”
جو شخص شبہات سے بچ گیا اس نے اپنے دین و عزت کو بچالیا۔”
(صحیح مسلم،حدیث نمبر_1599)

((( واللہ تعالیٰ اعلم باالصواب )))

(📲اپنے موبائل پر خالص قرآن و حدیث کی روشنی میں مسائل حاصل کرنے کے لیے “ADD” لکھ کر نیچے دیئے گئے نمبر پر سینڈ کر دیں،

📩آپ اپنے سوالات نیچے دیئے گئے نمبر پر واٹس ایپ کر سکتے ہیں جنکا جواب آپ کو صرف قرآن و حدیث کی روشنی میں دیا جائیگا,
ان شاءاللہ۔۔!!

⁦ 
📖 سلسلہ کے باقی سوال جواب پڑھنے کیلیئے ہماری آفیشل ویب سائٹ وزٹ کریں

یا ہمارا فیسبک پیج دیکھیں::

یا سلسلہ نمبر بتا کر ہم سے طلب کریں۔۔!!

*الفرقان اسلامک میسج سروس*

آفیشل واٹس ایپ نمبر
                   +923036501765

آفیشل ویب سائٹ
https://alfurqan.info/

آفیشل فیسبک پیج//
https://www.facebook.com/Alfurqan.sms.service2/

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں