174

سوال_کیا نکاح کے بعد کھجوروں کی تقسیم سنت سے ثابت ہے؟ یا پھر یہ بھی ہندوانہ رسم ہے؟ برائے مہربانی قرآن و حدیث سے رہنمائی فرمائیں

“سلسلہ سوال و جواب نمبر-357”
سوال_کیا نکاح کے بعد کھجوروں کی تقسیم سنت سے ثابت ہے؟ یا پھر یہ بھی ہندوانہ رسم ہے؟ برائے مہربانی قرآن و حدیث سے رہنمائی فرمائیں!

Published Date: 5-6-2021

جواب:
الحمدللہ:

*اللہ تبارک و تعالیٰ نے ہماری رہنمائی کے لئے رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو اپنا نبی و رسول بنا کر مبعوث کیا، آپ نے تمام امور میں ہماری رہنمائی کی ہے۔ خواہ عبادات ہوں یا معاملات*

ارشاد باری تعالیٰ ہے:

📚القرآن – سورۃ نمبر 33 الأحزاب
آیت نمبر 21

أَعُوذُ بِاللَّهِ مِنَ الشَّيْطَانِ الرَّجِيمِ
بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

لَقَدۡ كَانَ لَكُمۡ فِىۡ رَسُوۡلِ اللّٰهِ اُسۡوَةٌ حَسَنَةٌ لِّمَنۡ كَانَ يَرۡجُوا اللّٰهَ وَالۡيَوۡمَ الۡاٰخِرَ وَذَكَرَ اللّٰهَ كَثِيۡرًا ۞
ترجمہ:
بلاشبہ یقینا تمہارے لیے اللہ کے رسول میں ہمیشہ سے اچھا نمونہ ہے، اس کے لیے جو اللہ اور یوم آخر کی امید رکھتا ہو اور اللہ کو بہت زیادہ یاد کرتا ہو۔

یعنی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے تمام اقوال، افعال اور احوال میں مسلمانوں کے لئے آپ کی اقتداء و اتباع ضروری ہے خواہ ان کا تعلق عبادات سے ہو یا معاملات سے، معیشت سے ہو یا سیاست سے، الغرض زندگی کے ہر شعبے میں آپ کی ہدایات لینی چاہئیں۔ شرعی معاملات میں سے ایک مسئلہ نکاح کا بھی ہے یہ رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی مبارک سنت ہے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کئی صحابہ اور صحابیات رضی اللہ عنھم کے نکاح پڑھائے لیکن کسی بھی صحیح حدیث سے یہ بات نہیں ملتی کہ آپ نے نکاح کے انعقاد پر چھوہارے وغیرہ تقسیم کئے ہوں۔ مجھے یہ بات نہیں ملی کہ یہ ہندوانہ رسم ہے مسلمانوں میں اس چیز کا رواج چند ضعیف اور موضوع روایات کی بنا پر ہے۔

*ان کا مختصر تجزیہ درج ذیل ہے*

*پہلی روائیت*
📚عن عائشة رضي الله عنها أن رسول الله يَةُ “تزوج بعض نسائه، فنثر عليه التمرة””
“عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی کسی عورت سے شادی کی تو آپ پر خشک کھجوریں بکھیری گئیں۔”
(بیہقی 7/287، الکامل فی ضعفاء الرجال لابن عدی 2/741)

🚫*تبصرہ*
اس کی سند میں الحسن بن عمرو بن سیف العبدی ہے۔ امام علی بن المدینی اور امام بخاری نے اسے کذاب کہا ہے اور امام ابو حاتم رازی نے اسے متروک الحدیث قرار دیا ہے۔
(المغنی فی ضعفاء الرجال 1/254، کتاب الضعفاء والمتروکین لابن الجوزی 1/208)

📙ابن حجر عسقلانی فرماتے ہیں ” متروك ” (تقریب ص: 71)

📙امام بیہقی فرماتے ہیں: ” فيه لين ”
ابن حبان نے کہا یہ متروک ہونے کا مستحق ہے۔ (کتاب المجروحین 2/213)

📙اس کی متابعت ابن ابی داؤد نے کی ہے لیکن اس کی سند میں سعید بن سلام کذاب ہے۔ امام احمد نے اسے کذاب، امام بخاری نے روایات گھڑنے والا وضاع اور دارقطنی نے متروک اور باطل روایات بیان کرنے والا قرار دیا ہے۔
(کتاب الموضوعات 2/264 مطبوعہ کراچی)

📙علامہ محمد طاہر پٹنی ھندی نے بھی اس روایت کو باطل قرار دیا ہے۔
(تذکرۃ الموضوعات ص: 126)

لہذا یہ روایت باطل و من گھڑت ہے۔

________&_____

*دوسری روایت*
📚عن عائشة رضي الله عنها قالت كان النبى صلى الله عليه وسلم اذا زوج او تزوج نثر تمرا ”
“عائشہ رضی اللہ عنہا نے کہا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم جب کسی کی شادی کرتے یا خود شادی کرتے تو خشک کھجور بکھیرتے۔”
(بیهقی 7/288)

🚫*تبصرہ*
ا hyمام بیہقی فرماتے ہیں اس کی سند میں عاصم بن سلیمان البصری ہے جسے عمرو بن علی نے ج6ھوٹ اور وضع حدیث کی طرف منسوب کیا ہے۔ امام ذھبی فرماتے ہیں ” كذبه غير واحد ” اسے بہت سارے محدث نے کذاب قرار دیا ہے۔
(المغنی فی ضعفاء الرجال 1/506)

لہذا یہ روایت بھی جھوٹی اور من گھڑت ہے,

______&_____

*تیسری روائیت*
📚عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے انہوں نے کہا مجھے معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ایک انصاری آدمی کی شادی میں حاضر ہوئے۔
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے خطبہ پڑھا اور انصاری کا نکاح کر دیا اور فرمایا الفت، خیر اور اچھے کاموں کو لازم پکڑو۔ اپنے ساتھی کے سر پر دف بجاؤ تو اس کے سر پر دف بجائی گئی اور میووں اور شکر کے پیکٹ لائے گئے تو آپ نے وہ صحابہ پر بکھیر دئیے تو قوم رک گئی اور انہوں نے اسے نہ لوٹا تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
“کس قدر عمدہ بردباری ہے تو لوٹتے کیوں نہیں؟ انہوں نے کہا اے اللہ کے رسول! آپ نے اس اس دن لوٹنے سے ہمیں روکا تھا۔ آپ نے فرمایا:
“میں نے تمہیں لشکروں کی لوٹ مار سے روکا تھا۔ ولیموں کی لوٹ سے نہیں روکا پس تم لوٹو۔”
معاذ بن جبل نے کہا: “اللہ کی قسم میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو دیکھا آپ ہم سے چھین رہے تھے۔
(الکامل 1/312’313، الموضوعات لابن جوزی 2/260)

🚫*تبصرہ*
یہ روایت بھی جھوٹی ہے۔ اس کی سند میں بشیر بن ابراہیم الانصاری ہے۔

📙امام عقیلی فرماتے ہیں یہ امام اوزاعی کے نام سے جھوٹی روایات بیان کرتا ہے۔ ابن عدی نے فرمایا وہ میرے نزدیک روایات گھڑنے والوں میں سے ہے۔ ابن حبان فرماتے ہیں وہ ثقہ راویوں پر روایتیں گھڑتا تھا۔
(میزان 1/311)

📙یہ روایت ایک دوسری سند سے بھی مروی ہے اس میں حازم اور لمازہ دونوں مجہول ہیں۔ (الموضوعات لابن الجوزی 2/266)

لہذا یہ روائیت بھی دلیل نہیں بن سکتی،

________&_______

*چوتھی روائیت*
📚 انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ایک انصاری مرد اور عورت کی شادی میں شریک ہوئے آپ نے فرمایا: “تمہارا شاھد کہاں ہے؟ تو انہوں کہا ہمارا شاھد کیا ہے؟ آپ نے فرمایا “دف” تو دف لائے۔ آپ نے فرمایا اپنے ساتھی کے سر پر بجاؤ۔
پھر وہ اپنے برتن چھوہاروں وغیرہ سے بھر کر لائے اور انہوں نے چھوہارے وغیرہ بکھیرے تو لوگ اسے حاصل کرنے سے ڈرے جب آپ نے وجہ پوچھی تو انہوں نے بتایا کہ آپ نے لوٹ سے منع کیا ہے۔ آپ نے فرمایا میں نے لشکروں میں لوٹ سے منع کیا تھا شادی اور اس قسم کے مواقع سے منع نہیں کیا۔
(الموضوعات 2/266)

🚫*تبصرہ*
اس کی سند میں، خالد بن اسماعیل ہے جو کہ ثقہ راویوں پر روایات گھڑتا تھا۔ جیسا کہ امام ابن عدی نے فرمایا اور امام ابن حبان نے فرمایا: اس سے کسی صورت بھی حجت پکڑنا جائز نہیں،

📙امام بیہقی فرماتے ہیں:
” ولا يثبت فى هذا الباب شئى ”
“اس مسئلہ میں کوئی چیز ثابت نہیں۔”
(بیہقی 7/288)

_______&________

*مذکورہ بالا وضاحت سے معلوم ہوا کہ نکاح کے موقع پر چھوہارے بانٹنے اور بکھیرنے کے متعلق کوئی صحیح روایت موجود نہیں*

*یہ صرف ایک رواج ہے جو مسلمانوں میں چل نکلا ہے اور اس کے لئے دوکاندار سپیشل اشیاء پیکٹوں میں محفوظ کر کے فروخت کرتے ہیں اور شادی والے حضرات اسے لے جا کر نکاح کے بعد تقسیم کرتے ہیں*

*رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور آپ کے اصحاب رضی اللہ عنھم سے کوئی بات اس مسئلہ میں صحیح سند سے نہیں ملتی۔*

مآخذ:
(آپ کے مسائل اور ان کا حل
جلد3۔کتاب النکاح-صفحہ339)
محدث اردو فتوی

((( واللہ تعالیٰ اعلم باالصواب )))

📲اپنے موبائل پر خالص قرآن و حدیث کی روشنی میں مسائل حاصل کرنے کے لیے “ADD” لکھ کر نیچے دیئے گئے پر سینڈ کر دیں،
📩آپ اپنے سوالات نیچے دیئے گئے پر واٹس ایپ کر سکتے ہیں جنکا جواب آپ کو صرف قرآن و حدیث کی روشنی میں دیا جائیگا,
ان شاءاللہ۔۔!
سلسلہ کے باقی سوال جواب پڑھنے
کیلیئے ہماری آفیشل ویب سائٹ وزٹ کریں
یا ہمارا فیسبک پیج دیکھیں::
یا سلسلہ بتا کر ہم سے طلب کریں۔۔!!

*الفرقان اسلامک میسج سروس*

آفیشل واٹس ایپ
+923036501765

آفیشل ویب سائٹ
https://alfurqan.info/

آفیشل فیسبک پیج//
https://www.facebook.com/Alfurqan.sms.service2/

الفرقان اسلامک میسج سروس کی آفیشل اینڈرائیڈ ایپ کا پلے سٹور لنک 👇

https://play.google.com/store/apps/details?id=com.alfurqan

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں